Category : Homeopathy

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
Homeopathy With Sami
(Lecture Number 2 (General
(Life of Hahnemman) ہینیمن کی زندگی کے مختصر حالات
!معززنا ناظرین و سامعین اور عزیز طلباء و طالبات السلام و علیکم
میں خوش آمدید Homeopathy With Sami
ڈاکڑسیموئیل ہنیمن سن 1755ء میں جرمنی کے ایک علاقے سیکسنی میں پیدا ہوئے آپ کے والدین نہایت غریب تھے معاشی حالات خراب ہونے کی وجہ سے زیادہ تر گھر پر علم طلب کا مطالعہ کرتے تھے اور گزر بسر کے لئے لڑکوں کو ٹیوشن پڑھایا کرتے تھے سن 1779ء میں یونیورسٹی کی طرف سے ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی مگر اس وقت موجود طریقہ علاج یعٰنی علاج بالضد (ایلوپیتھی) کی کارکردگی سے مطمئن نہیں تھے لہٰذا آپ نے پریکٹس چھوڑدی اور گزربسر کے لئے میڈیکل کی کتابوں کے ترجمے کرنے شروع کردیئے یہ 1790ء کی بات ہے جبکہ وہ ایک اسکاچ پروفیسر ڈاکٹر کیولن کی میڑ یا میڑیکا با جرمنی میں ترجمہ کر رہے تھے دوران ترجمہ جب وہ سن کو نا بارک کے خواص کی بحث تک پہنچے تو یہ پڑھ کر تجسس کا شکار ہوگئے کہ سن کونابارک ملیریا بخار کو دور کرتی ہے ان کو خیال آیا کہ سن کونابارک ملیریا بخار کو کیسے دور کرتی ہے آپ نے سن کونابارک خریدی اور حالت صحت میں کھانا شروع کردی سن کونابارک کے استعمال سے ہنیمن کو سردی لگ کر بخار چڑھ گیا جس سے انہیں یہ معلوم ہوا کہ جب تندرست انسان سن کونابارک کھالیتا ہے تو ملیریا بخار جیسی علامات پیدا ہوجاتی ہیں اسی طرح دیگر ادویات کے بارے میں بھی ہنیمن کو یہ خیال گزرا کہ ممکن ہے جو دوائیں کسی مرض کے لئے مفید ہوں وہ تندرست انسان میں اسی مرض کی علامات پیدا کرسکیں با الفاط دیگر ہنیمن نے یہ سوچا کہ جو ادویات کسی مرض کی علامات پیدا کرسکتی ہیں وہی اس کے علاج میں مفید ثابت ہوسکتی ہیں چنانچہ مشاہدات اور تجربات ہنیمن کے اس نظریئے کی حقانیت کے شاہد ہیں
ہنیمن نے ادویات کے خواص کو تجربات کی مدد سے نوٹ کرنا شروع کیا آپ کا طریقہ کار یہ تھا کہ اپنے شاگردوں کو انفرادی طور پر دوائیں کھلاتے اور ساتھ ہی یہ ہدایت کرتے کہ ہر شخص ان کے اثر کو اپنے اوپر غور کرکے تحریر کرتا جائے اس طرح ہنیمن اپنے شاگردوں کے تجربات کو اکٹھا کر کے اپنے ذاتی تجربے سے مقابلہ کرتے اور جو علامات سب کے تجربات میں یکساں نظر آتیں انہیں دواوَں کے خواص میں درج کرلیتے
جب ہنیمن کو تحقیقات میں زیادہ تقویت ہوئ تو 1806ء میں ہوفیلڈ کے ایک رسالے میڈیسن آف ایکسپیریئنس میں ایک مضمون شائع کیا جس میں اپنی نئ ریسرچ پر روشنی ڈالی 1810ء میں ایک کتاب آرگینن شائع کی اس کتاب میں ہومیوپیتھک میڈیکل سائنس کے قوانین دفعہ دار بیان کئے گئے اس میں کل 292 دفعات ہیں بعد میں آپ نے خواص الادویہ (Materia Medica Pura) کے حوالے سے دو جلدیں مٹریا میڈیکا پیورا کے نام سے شائع کیں اور ایک رسالہ کرانک ڈیسیز پرانے امراض کے بارے میں تحریر کیا
ہنیمن نے ان تکالیف کو نظرانداز کرتے ہوئے جو انہیں ہومیوپیتھک طریقہ علاج کے پھیلانے میں پہنچائ گئیں بڑی جانفشانی اور استقلال کے ساتھ اپنی تمام تر قوت کو تا حیات ہومیوپیتھک طریقہ علاج کی اشاعت میں صرف کیا ہنیمن نے سن 1843ء میں وفات پائ آپ کی وفات کے بعد آپ کے شاگردوں اور ماہرین فن نے تجربات سے کئ ایک اہم نتائج اخذ کئے مگر یہ سب موجد ہومیوپیتھی ڈاکٹر سیموئیل ہنیمن کے انکشاف کے مرہون منت ہیں اس دعا کے ساتھ آج کے لیکچر کا اختتام کرتے ہیں کہ اللہ تعالٰی آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں بانٹنے کی توفیق عطا فرمائے آمین


Leave a Reply

SYED ZAHOOR HASSAN SAMI & ADNAN HASSAN SAMI….SHAJRA SHARIF

WhatsApp chat